1498 lives changed for the better

1498 – This is not just a number. This is the number of lives we have changed. This is the number of direct and indirect beneficiaries we have reached and positively affected. This is the number of stories we have to share. This is the number of beneficiaries whose future has been transformed. To break it down for you:

  • 214 direct beneficiaries
  • 1284 indirect beneficiaries

When Peace Through Prosperity started operations in Karachi early this year, we knew the economic-political challenges will raise walls and create blockers for our team and our project. With our determination, hard work and the trust individual beneficiaries placed in us we have succeeded in the first leg of our journey.

During a recent workshop in Qayumabad, we asked our latest batch of mini-MBAs beneficiaries to update us and each other on their progress;  their profit increased on average by 80%, fruit sellers who had one pushcart now owned two, the ones who had rented one were now the owners of their own pushcart, some saved enough to buy goats and the womenfolk in their family were now sell goats milk in the market to supplement their household income, their children were able to go to school, some are now able to afford to send their children to better schools and even private tuition. Individuals, families and communities who were stuck in poverty now have a means of their own making to gradually work their way out of poverty.

1599047 747746715296437 3359452338041883644 o 300x169 1498 lives changed for the better

Munib, after attending the mini-MBA program, now has a known brand in his neighbourhood as a reputable vegetable seller.

Peach Through Prosperity, till now, has worked in seven areas – Qayumabad, Sultanabad, Chakra Goth, Bilal Colony, Hijrat Colony, Korangi No.2 and Bangali Para. After the mini-MBA trainings empowering the micro entrepreneurs of these areas, workshops were held in order to increase cross communication between individuals from different neighbourhoods and communities and to share their successes and failures to peer source solutions to their challenges.

To share some narratives, Ayoub is a samosa seller with a cart in Korangi No.2. Following our mini-MBA program we put a growth plan for Ayoub, who saved enough to started another cart from Korangi Crossing, and employed a local unemployed youth to manage the second cart. Furthermore Ayoub went on to purchase a motor bike from his savings and now delivers snacks and rolls to nearby schools canteens in the mornings. What was and a micro business for Ayoub is now expanding into a full-fledge enterprise with a 100% growth in revenue and an unabated ambition to grow it further still.

Similarly, Mohammad a juice seller has been able to purchase another cart and set it up as his second juice cart and has employed his uncle to manage it, not only have Ayoub and Mohammad expanded their businesses they have created employment and prosperity in their local community.

10604476 728003153937460 2430771667229618715 o 300x169 1498 lives changed for the better

Habib speaking to his fellow micro entrepreneurs, motivating them to work hard for a brighter future. They can make it possible, too!

In our workshops we also invite an inspiring personality to speak to our beneficiaries and encourage them think big. In our last workshop, we invited Habib, President of Sindh Tajir Ittehad who shared his experiences with our members narrating his own journey from a push cart  started off with a pushcart too. From there Habib went on to buy one shop and now has a number of shops in Korangi and Saddar. Something that is not beyond the reach of our beneficiaries either.

With the news of our beneficiaries successes reaching far and wide the skepticism attached with our work has greatly reduced as well. In fact, in every workshop we get a lot of people who were not a part of our mini-MBA program but want to learn to improve their lives.

It’s not just the street based entrepreneurs who have benefited but we have been working hard to address the encroachment problem too. For instance, the road from Korangi 1.5 to Korangi No.2 was blocked and it used to take around 45 minutes to reach from one point to another. The 80 ft road was only had 20 ft dedicated to traffic and the rest was occupied by carts. Now, the area is 90% cleared out which has helped the traffic to run smoothly. It has not affected the business of these vendors but has helped them as the people now walk on foot towards them and even stay there for a while since the traffic does not disturb them anymore.

All what we did for these people was to make them organized and taught them the basics of their enterprise. These people used to call their work “hawai rozi” which means daily wages jobs but we instilled in them the notion that it is their business. They have to think about profits and sales if they want to save some money at the end of the day. This change of perception ensured the paradigm shift. Not only they started believing in saving but they also put their kids in schools so that their future could not same as theirs.

10608561 739898646081244 5412689619476139518 o 300x169 1498 lives changed for the better

We are now reaching out to more fruit, vegetable, samosa/rolls sellers and cobblers to help improve their lives. Currently, we are working with our 213 individuals and families, and helping them in every way possible to keep up their new model of business to secure their livelihood. To know more about the change Peace Through Prosperity is bringing with our work, visit our website  or follow us on Twitter or Facebook . You can also watch more life-changing stories on our Vimeo  channel. Stay tuned and be a part of the change you want to see in your society.

PTP Prosper by Business

Zeeshan HIJ 14 05 14 225x300 PTP Prosper by Business ذیشان ہجرت کالونی سبزی فروش

میران نام محمد ذیشان ہے اور میں تقریباٍ نو سال سے ہجرت کالونی میں رہائش پذیر ہوں پہلے میں صرف سبزی فروش کرتا تھا مگر آج میں اللہ کے کرم اور پی ٹی پی کی مہربانی سے مرغی کا کاروبار بھی کررہا ہوں۔ ابتدا میں جب پی ٹی پی کی ٹیم فارم بھرنے ہمارے پاس آئی تو ہم گھبرائے ہوئے تھے مگر آہستہ آہستہ اس گھبراہٹ سے چھٹکارا پاکر ہم نے منی ایم بی اے کی کلاسز میں حصہ لیا ان منی ایم بی اے کی کلاسز میں ہمیں بہت کچھ سیکھنے کو ملا ۔ سب سے پہلی بات جو ہم نے پی ٹی پی سے سیکھی وہ تھی منصوبہ بندی ہمیں اندازہ ہوا کہ کاروبار چھوٹا ہو یا بڑا اس میں منصوبہ بندی کی اشد ضرور ت ہوتی ہے ۔ پہلے ہمیں گاہک کوڈیل کرنا بھی نہیں آتا تھا مگر پی ٹی پی نے ہمیں بہترین تعلیم سے روشناس کرکے ایسی بہت سی چیزیں سکھائیں جو ہمارے کاروبار میں بہت کام آئیں ۔ یہ سب سیکھ کر میں نے منصوبہ بندی شروع کی اور پیسے بچاتے بچاتے میں نے مرغی کا کاروبار شروع کردیا۔ آج میرے دونوں کاروبار اچھے چل رہے ہیں اور میں ایک خوشحال زندگی بسر کررہا ہوں۔ پی ٹی پی نے میری کوئی مالی مدد نہیں کی مگر مجھے اپنے پاوں پر بھی کھڑا کردیا میری پی ٹی پی کی ٹیم سے درخواست ہے کہ اپنا کام نہ روکیں اور دوسرے علاقے کے ٹھیلے والوں کوبھی بہترین تعلیم سے آگاہ کریں تاکہ وہ بھی میری طرح خوشحال زندگی بسر کرسکیں۔

PTP Give Me The Vision

Riyasat Vegetable seller 300x272 PTP Give Me The Vision ریاست ہجرت کالونی
میرا نام ریاست ہے اور میں ہجرت کالونی میں رہتا ہوں ۔ مجھے ہجرت کالونی میں سبزی بیچتے ہوئے سات سال ہوگئے میرا روز کا معمول یہ تھا کہ اپنی دکان کھولتا اور اپنے دوستوں کو دکان پر بلالیا کرتا ۔ مجھے اس بات کا علم نہیں تھا کہ دوستوں کو دکان پر بٹھانے سے میرے کاروبار کو کتنا نقصان ہورہا ہے کیوں کہ ہجرت کالونی کی باپردہ خواتین میری دکان پرآنے سے کترانے لگی تھیں کافی سوچ بیچار کے بعد بھی مجھے اس مسئلے کا حل سمجھ نہیں آیا ۔ میں کماتا تھا اور آدھے پیسے وہیں دکان پر دوستوں کے ساتھ خرچ ہوجایا کرتے تھے میرے گھر والے بھی میری اس عادت سے تنگ آچکے تھے ۔ پھر پی ٹی پی کی ٹیم میری زندگی میں آئی مجھے ان کا وژن دیکھ کر بہت خوشی ہوئی ۔ پی ٹی پی نے منی ایم بی اے کی کلاسز میں مجھے بھی دعوت دی پھر میں نے پانچ روز مسلسل آکر منی ایم بی اے کی کلاسز لیں اور میرا سویا ہوا دماغ غفلت سے جاگ اٹھا۔ مجھے آہستہ آہستہ احساس ہوا کہ میرے کاروبار میں ترقی کیوں نہیں ہورہی ۔ اب میں پی ٹی پی کی دی ہوئی تعلیم پر مکمل طور پر عمل کررہا ہوں اور منصوبہ بندی بھی کرنے لگا ہوں۔ میں نے اپنی دکان پر فالتو دوستوں کو بلانا چھوڑ دیا ہے ۔ اب میں نے اپنے سبزی کے کاروبار کو بڑھادیا ہے ۔ اب ہجرت کالونی کے تقریباٍ پچاس فیصد لوگ مجھ سے سبزی خریدتے ہیں اور پی ٹی پی کے بینر کی وجہ سے انھوں نے میرا نمبر بھی نوٹ کرلیا ہے اب وہ نہ آنے کی صورت میں مجھے آرڈر لکھوادیتے ہیں میں انھیں دکان پر ملازمت کرنے والے لڑکے ہاتھوں سبزی بھجوادیتا ہوں۔ میری آنکھیں کھولنے پر میں پی ٹی پی کی ٹیم کا دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں ۔

The Happy Man Sher Bahadur

میرا نام شیر بہادر ہے اور میں قیوم آباد کا رہائشی ہوں میں یہاں پچھلے چودہ سال سے فروٹ بیچ رہا ہوں میرے مالی بہت خراب تھے مگر پھر پی ٹی پی کی ٹیم سے میری ملاقات ہوئی ۔ جب ابتدا میں پیس تھرو پروسپیریٹی ٹیم ہمارے پاس فارم بھرنے کے لیے آئی تو ہم بہت گھبرائے ہوئے تھے کہ کہیں یہ لوگ ہمارا ڈیٹا حاصل کرکے ہمیں کہیں پھنسا تو نہیں رہے لیکن بالاخر ہمت کرکے ہم نے ان کے فارم بھرنے میں تعاون کیا ، پھر منی ایم بی اے کی کلاسز ہوئیں اور پی ٹی پی کی ٹیم نے ہمیں بہترین منصوبہ بندی سکھائی گاہک کو متاثر کرنے کے طریقے بتائے ہم نے اس پر عمل کیا تو مشکلات میں ڈوبی کشتی آہستہ آہستہ پھر ساحل پر آگئی ۔ میں نے پی ٹی پی کی ان باتوں پر عمل کرکے نا صرف اپنے کاروبار کو بڑھایا بلکہ میں نے ایک بکری بھی خرید لی ہے ۔ میری بیوی نے ایک بکری کا دود ھ نکال کر علاقے میں بیچنا شروع کیا تو اس منافع سے ہم نے ایک اور بکری خرید لی ۔ مجھے پی ٹی پی کے ساتھ کام کرتے اب سات ماہ بیت گئے ہیں اور یقین جانیے میں نے ان سات ماہ میں جتنی ترقی کی اتنی چودہ سال میں نہیں کی ۔ اب میں اپنے آپ کو خوشحال گھرانوں کی فہرست میں کھڑا دیکھتا ہوں مگر ترقی کا سفر ابھی ختم نہیں ہوا ابھی تو صرف شروعات ہے ہمیں آگے بہت ترقی کرنی ہے۔ میری پی ٹی پی کی ٹیم سے درخواست ہے کہ وہ میرے جیسے دوسرے بھائیوں کو بھی تعلیم کے ذیور سے آراستہ کرے تاکہ خوشحالی کا یہ عمل پھیلتا جائے اور امن کے ذریعے خوشحالی آتی جائے ۔۔

Muhammad Shahid Qayyum Abad Karachi

میرا نام محمد شاہد ہے اور میں قیوم آباد میں گیارہ سال سے جوس فروخت کررہا ہوں میں پہلے اپنے کاروبار کو ہوائی روزی سمجھتا تھا اور اس پر توجہ نہیں دیتا تھا مگر پی ٹی پی کی ٹیم سے ملاقات کے بعد صورت حال یکسر تبدیل ہوگئی۔ پی ٹی پی کی ٹیم نے مجھے سمجھایا کہ کوئی بھی کاروبار چھوٹا یا ہوائی نہیں ہوتا چھوٹے کاروبار پر محنت کرکے اسے بڑھایا جاسکتا ہے۔ منی ایم بی اے کی کلاسز لینے کے بعد میرا یقین پختہ ہوا تو میں نے اپنے کاروبار پر محنت کرنا شروع کی اور اسی محنت کے نتیجے میں آج نے ایک ٹھیلے سے دو ٹھیلے کرلیے ہیں اس کوشش میں پی ٹی پی نے میری کوئی مالی مدد نہیں کی بلکہ صرف مجھے اپنے پاؤں پر کھڑا ہونے میں مدد دی اور مجھے بہترین تعلیم سے روشناس کیا۔ اب مجھے ایک کے بجائے دو ٹھیلوں سے آمدنی ہوتی ہے ایک ٹھیلے پر میں نے اپنے ماموں کو رکھ لیا ہے جو خود بھی بے روزگاری کی وجہ سے پریشان تھے، میں اس بہترین تعلیم پر پی ٹی پی اور اس کی پوری ٹیم کا دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں ۔۔